آرٹیکل

نکاح کے علاوہ معاشرت کا طریقہ

Written by Admin

السلام علیکم! محترم علامہ صاحب گزارش ہے کہ پاکستان میں مجھے کچھ سیاسی معاملات کی وجہ سے نکلنا پڑا، ابھی کچھ سال واپسی ممکن نہیں۔ میری عمر 29 سال ہے، غیر شادی شدہ ہوں۔

ز نا اور شر ا ب ہر چیز سے توبہ کر لی اور نکاح کیلئے ہر ممکن کوشش کی لیکن ناکامی ہوئی۔ نکاح کے لیے پاکستان جانا ضروری ہے جو میں نہیں جا سکتا۔ کیا میں لونڈی یا کسی اور کانسیپٹ پر عمل کر کے گناہ سے بچ سکتا ہوں؟ براہ کرم رہنمائی فرما دیں

۔قرآنِ مجید میں اللہ تعالیٰ نے مومنین کی صفات بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ مومن وہ لوگ ہیں جو:الَّذِينَ هُمْ لِفُرُوجِهِمْ حَافِظُونَ. إِلَّا عَلَى أَزْوَاجِهِمْ أوْ مَا مَلَكَتْ أَيْمَانُهُمْ فَإِنَّهُمْ غَيْرُ مَلُومِينَ. فَمَنِ ابْتَغَى وَرَاءَ ذَلِكَ فَأُوْلَئِكَ هُمُ الْعَادُونَ.جو (دائماً) اپنی شر م گاہوں کی حفاظت کرتے رہتے ہیں۔ سوائے اپنی بیویوں کے یا ان باندیوں کے جو ان کے ہاتھوں کی مملوک ہیں

، بیشک (احکامِ شریعت کے مطابق ان کے پاس جانے سے) ان پر کوئی ملامت نہیں۔ پھر جو شخص ان کے سوا کسی اور کا خواہش مند ہوا تو ایسے لوگ ہی حد سے تجاوز کرنے والے (سرکش) ہیں۔قرآنِ مجید کی اس آیت کی روشنی میں علماء کی اکثریت اس بات پر متفق ہے کہ بیوی اور لونڈی کے علاوہ مبا شر ت اور جنسی خواہش کی تکمیل کے تمام طریقے حرام ہیں۔

کسی شخص کے لئے جائز قربت کی صرف دو صورتیں ہیں: ایک نکاح اور دوسری شرعی باندی (ملکِ یمین)۔ لونڈی اور غلام وہ لوگ تھے جو جنگ سے گرفتار ہوتے یا وہ لوگ تھے جن کو صدیوں سے معاشرے کے غالب طبقے نے نان و نفقہ کے بدلے غلام بنا رکھا تھا۔ ان کی باقاعدہ تجارت ہوتی تھی اور منڈی میں قیمت لگتی تھی۔ اس غلامی کی قانونی پوزیشن یہ تھی

کہ لونڈی اور غلام دنیا میں کسی چیز کے مالک نہ تھے۔ جب سے انہوں نے ہوش سنبھالا اپنا بکنا، بکانا دیکھا۔ نہ کوئی گھر، نہ وطن، نہ ان کی سوچ، نہ رائے، نہ ارادہ و اختیار، اس غلامی کو اسلام نے مختلف صورتوں سے کفارات و صدقات کی شکل میں ختم کیا اور کسی آزاد کو غلام بنانا گناہِ کبیرہ قرار دیا۔

گویا آئندہ کے لئے غلامی کا مستقل طور پر قلع قمع کر دیا۔دورِ جدید میں انسانیت غلامی کی ممانعت پر متفق ہے اور دنیا سے غلامی کا خاتمہ ہو چکا ہے۔ فقہائے اسلام کا بھی اجماع ہے کہ آج کے دور میں کسی انسان کو غلام یا لونڈی نہیں بنایا جاسکتا کیونکہ یہ بین الاقوامی قوانین، عرف اور تعامل کے خلاف ہیں

۔ اسلام کے ابتدائی دور میں جن حالات اور اسباب کی بنا پر غلام اور لونڈی بنانے کی اجازت دی گئی تھی وہ حالات و اسباب اب مفقود ہیں۔ ویسے بھی کسی آزاد عورت کو لونڈی نہیں بنایا جاسکتا۔ اس لیے مبا شر ت صرف اسی عورت سے جائز ہے جو آپ کی منکوحہ ہو۔ آپ نکاح کی کوشش کرتے رہیں‘ اللہ تعالیٰ آپ کے لیے آسانیاں پیدا فرمائے گا۔ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے

:وَلْيَسْتَعْفِفِ الَّذِينَ لَا يَجِدُونَ نِكَاحًا حَتَّى يُغْنِيَهُمُ اللَّهُ مِن فَضْلِهِ.اور ایسے لوگوں کو پاک دامنی اختیار کرنا چاہئے جو نکاح (کی استطاعت) نہیں پاتے یہاں تک کہ اللہ انہیں اپنے فضل سے غنی فرما دے۔عَنْ عَبْدِ ﷲِ فَقَالَ کُنَّا مَعَ النَّبِيِّ فَقَالَ مَنِ اسْتَطَاعَ الْبَائَةَ فَلْيَتَزَوَّجْ فَإِنَّه اَغَضُّ لِلْبَصَرِ وَاَحْصَنُ لِلْفَرْجِ وَمَنْ لَمْ يَسْتَطِعْ فَعَلَيْه بِالصَّوْمِ فَإِنَّه لَه وِجَاءٌ.’’عبداﷲ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ

ہم نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ تھے تو آپ نے فرمایا: جو عورت کا مہر ادا کرسکتا ہو وہ نکاح کر لے کیونکہ یہ نظر کو جھکاتا ہے اور شر مگا ہ کے لیے اچھا ہے اور جو ایسا کرنے کی طاقت نہ رکھتا ہو تو وہ روزے رکھے کیونکہ یہ شہوت کو گھٹاتا ہے۔‘‘بخاري، الصحيح، 2: 673، رقم: 1806، دار ابن کثير اليمامة، بيروتدرج بالا احکام سے واضح ہے کہ

بیویوں کے علاوہ کسی اور طریقے سے شہوت پوری کرنا جائز نہیں۔ رسول اللہ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے گناہ میں مبتلا ہونے کا خوف دور کرنے کے لیے دوسرا قابلِ عمل طریقہ بتا دیا ہے۔

Comments are closed.

About the author

Admin

Leave a Comment