Uncategorized آرٹیکل دلچسپ و عجیب

مرد میں کیا چیز عورت کو پاگل بنا سکتی ہے؟

Written by Admin

محبت ایک لافانی جذبہ ہے جو قدرت نے ہر انسان کی شخصیت میں جمع کر رکھا ہے۔ محبت ایک لطیف اور پاکیزہ جذبہ ہے۔ انسان بھی مکمل نہیں ہے۔ رب العزت جو کائنات کا خالق ہے اور روز جزا کا بھی مالک ہے – قرآن اپنے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے مقدس صحیفوں میں کئی بار اپنی محبت کا اظہار کرتے ہوئے اس عظیم اور پاکیزہ جذبے کو تقویت بخشتا ہے – وہی رب، جو کہ ایک عظیم اور پاکیزہ روح ہے۔ خالق بھی اپنی تخلیق سے ستر ماؤں جتنی محبت کا دعویٰ کرتا ہے، اس لیے یہ بات پورے وثوق کے ساتھ کہی جا سکتی ہے کہ محبت کرنا اور محبت کرنا ایک فطری امر ہے اور یہ سلسلہ تخلیق آدم سے لے کر دنیا کے آخر تک جاری ہے۔ مرد اور عورت کے درمیان محبت کا آغاز آدم اور حوا سے ہوا تھا۔

قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’یہ اللہ کی نشانیوں میں سے ہے کہ اس نے تمہارے لیے تمہاری ہی قسم کے جوڑے بنائے تاکہ تم ان میں سکون پاؤ اور آپس میں محبت اور مہربانی قائم رکھو‘‘۔ اس لیے یہ کہا جا سکتا ہے کہ مردوں کے لیے عورتوں کی کشش اور عورتوں کے لیے مردوں کی کشش انسانی فطرت میں محفوظ رہی ہے، حالانکہ دنیا کی پہلی خاتون حضرت ام ہُوَا سلام اللہ علیہا کی تخلیق پسلی سے ہوئی تھی۔ حضرت آدم علیہ السلام کے بارے میں عرض کیا کہ اے رب یہ کون سی مخلوق ہے جس نے میرے جسم سے پیدا کیا؟

جس کی کشش اور محبت میں اپنے دل میں محسوس کرتا ہوں، اللہ نے جواب دیا۔ یہ وہ محبت ہے جو میں نے تم دونوں (مرد اور عورت) کو ہمیشہ کے لیے وصیت کی ہے۔ اب زمین پر اُترو، خدا کی حکمت کے مطابق نسلِ انسانی کی ترقی کا سبب بنو اور قیامت تک وہیں رہو، تو اگر کوئی کہے کہ مرد کو عورت کی طرف راغب نہیں ہونا چاہیے۔ عورت کو مرد کی طرف متوجہ نہیں ہونا چاہیے، وہ دراصل ان فطری انسانی جذبات کی نفی کرتی ہے- زندگی پھول ہے تو محبت اس کی خوشبو ہے- میں یہاں بتاتا چلوں کہ خواہش انسانی فطرت میں ایک بہت بنیادی جذبہ ہے اور جذبے کی شدت ہے۔ کیونکہ لگتا ہے کہ محبت اپنے عروج پر ہے۔ زمانہ قدیم سے انسان نے محبت کے اظہار کے لیے شاعری اور رومانوی افسانوں کا سہارا لیا ہے۔

اسے اپنی بھوک اور جذباتی تسکین کے لیے ایک رومانوی رشتے کی ضرورت ہوتی ہے، جو اس کی ذہنی اور جسمانی صحت میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے – محبت وہ جذبہ ہے جو کسی کی جان بھی لے سکتا ہے۔ وہ ساری زندگی محبت حاصل کرنے کے لیے لگا دیتا ہے اور کبھی کبھی اپنی محبت حاصل کرنے کے لیے کسی دوسرے کی جان لینے سے بھی دریغ نہیں کرتا- ایسا کیوں ہوتا ہے؟ اس سوال کے جواب کی تلاش میں ہر ذی شعور انسان ادھر ادھر دیکھ رہا ہے۔ تقریباً تیس سال قبل ماہرینِ نفسیات کی ایک ٹیم نے محبت کے انسانی جذبات پر تحقیق کے لیے دنیا کی مختلف ثقافتوں کا مطالعہ کیا – اس دوران انھوں نے پاکستان، انڈیا، امریکہ کا دورہ کیا۔ روس نے ایک سوالنامہ تیار کیا ہے جس میں مختلف مزاج کے میکسیکن لوگوں کے ساتھ محبت اور رومانوی تعلقات کے بارے میں 15 بنیادی سوالات ہیں۔

اس نے جو نتیجہ اخذ کیا وہ یہ ہے کہ یہ جذبہ تمام تہذیبوں میں بڑی شدت اور یکسانیت کے ساتھ موجود ہے، لیکن بعض سوالات کے حوالے سے انسان پھر بھی پیاسا ہے، مثلاً یہ جذبہ انسانی جذبات میں ہیجان کی کیفیت کیوں پیدا کرتا ہے؟ رومانوی رشتوں کی وجہ سے انسان میں کس قسم کی کیمیائی اور حیاتیاتی تبدیلیاں آتی ہیں؟ انسان کب پیار کرتا ہے؟ محبت انسان کے دل و دماغ پر کیا اثرات مرتب کرتی ہے؟ ان سوالوں کا جواب دو اب موجودہ سائنس دے رہی ہے، سائنسدانوں کی تحقیق کے مطابق ہر انسانی جسم کی ایک مخصوص بو (بو) ہوتی ہے جس کے مالیکیول جسم کو چھوڑ کر ہوا میں بے ساختہ اڑ جاتے ہیں- اس انسانی بو کے رومانوی تعلق پر۔ اثر بہت گہرا ہے – یہ تعلق اس وقت پیدا ہوتا ہے جب وہ لاشعوری طور پر اس خوشبو سے ایک دوسرے کی طرف متوجہ ہوتے ہیں۔

سائنس دانوں کے مطابق ہر جاندار میں ایک ہی عمل موجود ہے۔ ہم اپنے جسم سے نکلنے والی خاص بو سے ہی اپنی نسل کو پہچانتے ہیں۔ موجودہ دور میں اس کی مثال ہم پرفیوم یا پرفیوم سے دے سکتے ہیں، ان میں سے کچھ پرفیوم بھی شامل ہیں۔ خوشبو میں ایسے کیمیائی اجزا استعمال کیے جاتے ہیں کہ عورت اور مرد ایک دوسرے کی طرف متوجہ ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ سائنسدانوں نے بعض کیمیائی عناصر کی مخصوص ترکیب کو اس طرح ترتیب دیا ہے کہ وہ براہ راست انسان کے حساس ترین نظاموں کو متاثر کرتے ہیں اور جذبوں کی کشش اور شدت پیدا کرنے کا باعث بنتے ہیں – عموماً یہ عطر۔ ایسے اوقات میں استعمال کیا جاتا ہے جیسے –

Sharing is caring!

About the author

Admin

Leave a Comment